کتاب عمر کا ایک اور باب ختم ہوا - منیر نیازی

ٹرومین نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏11 نومبر 2017

  1. ٹرومین

    ٹرومین رکن

    مراسلے:
    30
    کتاب عمر کا ایک اور باب ختم ہوا
    شباب ختم ہوا اک عذاب ختم ہوا

    ہوئی نجات سفر میں فریب صحرا سے
    سراب ختم ہوا اضطراب ختم ہوا

    برس کے کھل گیا بادل ہوائے شب کی طرح
    فلک پہ برق کا وہ پیچ و تاب ختم ہوا

    جواب دہ نہ رہا میں کسی کے آگے منیر
    وہ اک سوال اور اس کا جواب ختم ہوا
    منیر نیازی​
    منیر نیازی کی یہ غزل اس سے قبل بھی کئی جگہوں پر آن لائن موجود ہے مگر چوپال کے صفحات پر اپنی پسندیدگی درج کروانے کے لیے دوبارہ سے ٹائپ کی ہے۔
  2. محمداحمد

    محمداحمد رکن

    مراسلے:
    55
    منیر نیازی کی سدا بہار غزل ہے۔یاد دلانے کا شکریہ!

    ویسے اگر آپ ٹائپ کرنے کے بجائے کہیں سے کاپی پیسٹ کرتے تب بھی پسندیدگی کا اندراج ہو جاتا ۔ :) :) :)
  3. ٹرومین

    ٹرومین رکن

    مراسلے:
    30
    تب شہیدوں میں نام نہ آتا۔ساتھ میں اصل "کمپوزر" کا حوالہ بھی دینا پڑتا وگرنہ چوری ہوتے ۔یوں ہم نے "سیانےپن" کا ثبوت دیتے ہوئے "ٹائپ دیا"۔اب اس کا تمام تر کریڈٹ چوپال کی ملکیت ہوگیا ہے۔
    ہا ۔ہا

اس صفحے کی تشہیر