وطن سے محبت

ابومریم نے 'دیس دیس کے رنگ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏20 مئی 2014

  1. ابومریم

    ابومریم رکن

    مراسلے:
    8
    آج کچھ لوگ اپنے فہم و عقل کو کل سمجھتے ہیں ، اور جب کسی شے کو دیکھتے ہیں ،تو اپنی خصلت میں موجود انکے منفی رجحانات ،اس شے کے بارے نظریات قائم کرتے ہیں۔ اور پھر ان باطل نظریات کو پھیلانے کے لئے وہ اسے حق اور درست بات کے ساتھ ایسا گڈ مڈ کرتے ہیں کہ انسانوں کو صرف اسی کو حقیقت پسندانہ رویہ قرار دیتے ہیں۔کچھ ایسا ہی حال ان ناعاقبت اندیشوں کا ہے جو یہ کہتے پھرتے ہیں کہ وطن و دھرتی سے محبت کی کوئی حیثیت نہیں ، جو دینی جماعتیں اور طبقات اس پاک دھرتی سے محبت کرتے ہیں ، وہ وطنیت پرست ہیں ، گمراہ و باطل ہیں۔ باوجود اس ملک کے اکثریت یا تقریبا تمام عوام کی اس پاک وطن محبت اسلام کی وجہ سے ہے اور اس خطی ارضی کی کفار و مشرکین سے حفاظت میں بہنے والے لہو کی وجہ ہے۔اور اس محبت کو محض چند گنے چنے سیکیولر یا سیکیولر نما حلقوں کی "مادہ پرستی" کی وجہ سے باطل اور کفر شرک تک قرار دیئے پھر رہے ہوتے ہیں۔

    وہ اقبال کی ساری شاعری کہ جس میں مسلمانوں کی سرزمین سے محبت، اسکی حفاظت اور قدر کرنے کے سبق کے ساتھ ساتھ کفار و مشرکین سے ایسے علاقوں کو آزاد کروانے کا سبق ملتا، محض صرف ایک شعر کو اس کے سیاق و سباق (یعنی اس شعر کا مخاطب جو طبقہ خاص) سے ہٹا کر سب محبان پاکستان پر فٹ کر کے ، انہیں دین سے بدک کر محبت کی پوجا کرنے والا شمار کرتے ہیں ۔ اگر اقبال رحمہ اللہ کا وطنیت کے بارے یہی نظریہ ہوتا تو پاکستان کی شکل میں مسلمانوں کو ایک خطہ میں جمع ہونے پر نہ ابھارتا، دو قومی نظریہ کبھی سامنا نہ آتا ۔

    میرا ان جاہل لوگوں سے فقط اتنا پوچھنا ہے کہ اگر دھرتی سے محبت کی واقعی ہو کوئی حیثیت نہیں اور یہ تو محض ایک گمراہی ہے تو اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی مدینہ اور کہ سے محبت کی کیا حیثیت ہے؟

    آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی اپنی جائے پیدائش مکہ ، جہاں آپ کا خاندان آباد تھا، محبت کی کیا حیثیت ہے؟
    آپ کی مدینۃ منورۃ سے محبت کیا حیثیت ہے، جس میں شہدا بدر ، احد ، احزاب و حنین کے شہداء دفن ہیں؟

    تو "وطن پرستی" کی غلط تشریحات کرنے والوں کو میری یہ مودبانہ نصیحت ہے ، مسلمانوں کی زمین اور دھرتی سے محبت ہونا یا کرنا کوئی جرم نہیں۔ جو لوگ جس علاقے میں پیدا ہوتے ہیں اس خطے زمین سے انکی محبت فطرت میں سے ہے، جیسے ماں کی کوک سے جنم لینے والے بچے کی ماں سے محبت تو اپنی جائے پیدائش سے محبت کرنا کیسے جرم ٹھہرا؟

    اور اسی طرح جب کوئی چیز اپنوں اور پیاروں کی قربانی کے بعد حاصل کی جاتی ہے تو انسان اس چیز سے اپنی جان سے بڑھ کرتا ہے اس پر جان دیتا ہے، اور دے بھی کیوں نہ ،اللہ کو تو اس زمین پر غلبہ صرف اہل اسلام کا ہی پسند ہے۔ تو پھر لاکھوں مسلمانوں کی قربانیوں سے حاصل کردہ اور پھر جس کی حفاظت میں ہزاروں مسلمان جوانوں کا خون بہا ،اس خطہ ارضی سے محبت رکھنا کس دلیل کے تحت باطل ٹھہرا؟

    الحمد للہ آج ہر پاکستانی اگر پاکستان سے محبت کرتا ہے تو اسکی وجہ اس خطہ ارضی کا "لاالہ الا اللہ" کے نام پر حصول کی وجہ سے کرتا ہے، اس "لاالہ الااللہ" کی جاگیر کی حفاظت میں جتنے نفوس اپنے لہو میں نہائے ان کی وجہ سے محبت کرتا ہے۔ اور ایسے محبت کرنے والوں کو طعنہ دینے والو، ان فتوی کسنے والو، ذرا سوچو!

    اس پاک سرزمین سے اس کے مسلمان باسیوں نے محبت نہیں کرنی تو بھارت، امریکہ ، برطانیہ و اسرائیل سمیت تمام اہل کفر و شرک نے کرنی ہے؟؟؟

اس صفحے کی تشہیر