مخفی عبادت

عبدالحسیب نے 'متفرق موضوعات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏2 اپریل 2017

  1. عبدالحسیب

    عبدالحسیب رکن

    مراسلے:
    1,225
    مخفی عبادت

    سچ ہے کہ اللہ جس سے محبت کرے اس کے لیے زمین میں مقبولیت کے دروازے کھول دیتا ہے
    رسول اللہﷺ نے فرمایا
    " اللہ کسی بندے سے محبت کرتا ہے تو جبرائیل کو آواز دیتا ہے ؛
    " میں فلاں سے محبت کرتا ہوں،تم بھی اس سے محبت کرو`جبرائیل اس سے محبت کرنے لگتا ہے،
    پھر جبرائیل اہل آسمان میں اعلان کرتا ہے
    " اللہ فلاں سے محبت کرتا ہے تم بھی اس سے محبت کرو
    اہل آسمان بھی اس سے محبت کرنے لگتے ہیں
    پھر اس آدمی کے لیے اہل ارض کے درمیان محبت نازل ہوتی ہے .

    سبحان اللہ !
    اللہ کریم جس سے محبت کرے یقنن وہ دنیاو آخرت میں کامیاب ہوگیا
    اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے آخر اللہ کریم کن بنیادوں پر ایک آدمی سے محبت کرتا ہے
    ویسے تو اللہ پاک ہر مومن بندے سے محبت کرتے ہیں
    مگر اللہ تعالی نے کچھ ایسے اعمال بتائے ہیں جس کی بنیاد پر اللہ کریم اپنے بندے کو خاص عزت عطاکرتے ہیں .
    ان میں سے ایک ہے مخفی عبادت ...
    جلیل القدر صحابی رسول زبیر بن عوام رضی اللہ عنہ کہا کرتے تھے
    " تم میں سے جو شخص ایسا کر سکے اگر اس کا کوئی صالح عمل پوشیدہ رہ سکے تو وہ ضرور ایسا کرے.
    ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کا معمول تھا کہ آپ فجر کی نماز کے بعد صحرا کی طرف نکل جاتے وہاں چند ساعتیں گزارتے اور مدینہ واپس آجاتے .
    عمر رضی اللہ عنہ کو بڑا تحجب ہوا کہ ابوبکر صبح ہی صبح صحرا میں کیا لینے جاتے ہیں .ایک دن فجر کی نماز کے بعد انھوں نے چپھ کر ابوبکر رضی اللہ عنہ کا تعاقب کیا کیا دیکھتے ہیں ابوبکر رضی اللہ عنہ ایک پرانے خیمے کے اندر گئے تھوڑی دیر بعد باہر آئے اور مدینہ کو نکل پڑے .
    عمررضی اللہ عنہ چٹان کی اوٹ سے نکلے اور خیمے میں داخل ہوئے کیا دیکھتے ہیں ایک نابینا کمزور عورت اس کے چھوٹے بچے بیٹھے ہیں
    آپ نے اس عورت سے دریافت کیا یہ کون ہے ؟؟
    جوتمہارے پاس آتا ہے ؟
    وہ بولی ! میں نہیں جانتی کوئئ مسلمان ہے ایک عرصے سے ہرصبح میرے پاس آتا ہے
    گھر کا جھاڑو دیتا ہے آٹاگوندھتا ہے ہماری بکری کا دودھ دوہتا ہے اور چلاجاتا ہے ...
    (سبحان اللہ یہ ہوتی ہے مخفی عبادت)....

    اس کی بات سن کر عمر رضی اللہ عنہ یہ کہتے ہوئے خیمے سے باہر آگئے :
    "! ابوبکر ! آپ نے اپنے بعد کے خلفاء کو بڑی مشقت میں ڈال دیا ہے .
    عمر رضی اللہ عنہ بھی عبادت اور اخلاص میں ابوبکررضی اللہ عنہ سے پیچھے نہ رہے
    طلحہ بن عبید رضی اللہ نے انھیں رات کی تاریکی میں اپنے گھر سے نکل کر ایک گھر میں داخل ہوتے اور پھر وہاں سے نکل کر دوسرے گھر میں جاتے دیکھا وہ حیران ہوئے کہ امیر المومنین ان گھروں میں کیا کرتے ہیں
    صبح ہوتے ہی طلحہ اس بات کا سراغ لگانے پہلے گھر گئے
    ان کی ملاقات چارپائی پر پڑی نابینا بڑھیا سے ہوئی اس سے دریافت کیا
    "یہ آدمی آپ کے پاس کیوں آتا ہے
    بڑھیا بولی ! یہ آدمی مدت سے میرا خیال رکھتا ہے گھر کہ صفائی کرتا ہے تازہ پانی بھرتا ہے میرا بول وبراز صاف کرتا ہے
    اس پر طلحہ یہ کہتے ہوئے بڑھیا کے گھر سے باہر آگئے
    طلحہ! تہماری بربادی ہو تم عمر کی غلطیاں تلاش کرتے ہو!!!

    علی بن حسین رضی اللہ عنہ رات کو روٹیوں کا بورس کمر پر لادے گھر سے نکلتے اور روٹیوں کا صدقہ کرتے
    کہاکرتے تھے
    "چھپا کر صدقہ کرنا رب کے غضب کو ٹھنڈا کردیتا ہے"
    انھوں نے وفات پائی تو غسل دیتے ہوئے لوگوں نے ان کی کمر پر سیاہ نشان دیکھے
    لوگوں نے کہا " یہ مزدور کی کمر ہے مگر ہم نہیں جانتے انہوں نے کبھئ مزدوری کی ہے '
    ان کی وفات پر مدینہ کی بیواوں اور یتمیوں کے سو گھروں میں کھانا پہنچنا بند ہوگیا .
    گھر والوں کو نہیں پتہ تھا ان کے گھروں میں کھانا کون لاتا تھا ان کہ وفات پر سب کو معلوم ہوا .
    سبحان اللہ ! یہ تھی ہمارے صلف صالحین کی مخفی عبادت جس کے ساتھ صدقہ کرتے اس کو بھی معلوم نا ہوتا
    دراصل یہ لوگ زندگی کے تمام حالات میں اللہ کی عبادت کا شعور بیدار رکھتے تھے یہی لوگ حقیقی معنوں میں متقی تھے .
    ماخوذ :زندگی سے لطف اٹھائیے

    اس کےعلاوہ بھی مخفی صدقہ کی بہت سی اقسام ہیں
    لوگوں کی آپس میں صلح کرانے کا عمل بھی مخفی عبادت کی قسم ہے
    روٹھے کو منانا
    پڑوسیوں کو ایک دوسرے کے قریب کرنا
    ناراض میاں بیوی کی باہمی تلخی دور کرنا
    ایسے ہی اگر ہم دیکھیں مخفی صدقہ/عبادت کے بہت سے مواقع ہم کو مل سکتے ہیں.

    رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم فرمایاکرتے تھے
    بندہ اپنےاللہ کے سب سے قریب سجدے کی حالت میں ہوتاہے .

    اگر ہم اپنی زندگی کا محاسبہ کریں نظر ڈالیں کیا ہم اپنے اندر ایک ایسا عمل دیکھ سکتے ہیں جو ہم صرف اور صرف مخفی رکھ کر اللہ کی رضا کے لیے کرتے ہوں!!!!!
    نہیں نہیں واللہ ایک زرہ کے برابر بھی مجھ میں ایسا عمل نہیں....
    آفسوس سے کہنا پڑرہاہے !
    نفلی عبادت تو دور کی بات جو 5وقت اللہ کریم نے نماز ہم پر فرض کی ہوئئ ہے ہمارے پاس اس کے لیے بھی وقت نہیں .....الا کہ کوئی مخفی عبادت کریں !
    تو آئیے آج ہی سے عہد کریں اپنے اندر changing لائیں
    نمازوں کی پاپندی کریں ، استطاعت کے مطابق نیک کاموں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں
    نفلی عبادت کے لیے وقت نکالیں
    اللہ کے نبی جناب محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا انسان کے جسم کے360 جوڑ ہے ہر جوڑ کا صدقہ ہے
    سبحان اللہ کہنا بھی صدقہ ہے الحمداللہ کہنا بھی صدقہ ہے اس سے بہتر نا بتاوں میں تم کو صبح اٹھ کر سورج نکلنے کے بعد 2 رکعات نماز پڑھنا پورے جسم کا صدقہ ہے .
    کیسی بہترین عبادت ہے یہ ہم سب صبح تیار ہوتے ہیں کیسا ہی بہتر ہو جب بھی اٹھیں جو بھی ٹائم ہو ساتھ وضو کر لیں اور مختصر سے 2 رکعات نماز ادا کرلیں ....اس سے اللہ کا شکر بھی ادا ہو جائے گا.
    اللہ کریم ہم سب کو نیک اعمال کرنے کی توفیق دئے ہمارے گناہوں پر پردہ پوشی کرے
    اور ہم سے راضی ہو جائے ....آمین یارب
    • پسند پسند x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
  2. سلیمان

    سلیمان منتظم

    مراسلے:
    1,602
    جزاک اللہ خیرا
    فورم پہ واپسی مبارک ہو بھائی۔
    • پسند پسند x 2
  3. عبدالحسیب

    عبدالحسیب رکن

    مراسلے:
    1,225
    شکریہ بھائی
    • پسند پسند x 1
  4. فلک شیر

    فلک شیر منتظم

    مراسلے:
    1,187
    جزاک اللہ خیر

    Sent from my LG-F160LV using Tapatalk
    • پسند پسند x 1

اس صفحے کی تشہیر