جامعۃ الدعوۃ السلامیۃ مرکز طیبہ مریدکے

مطیع الرحمان نے 'تعلیم و تدریس' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏19 ستمبر 2012

  1. مطیع الرحمان

    مطیع الرحمان رکن

    مراسلے:
    227
    گلستان توحید و رسالت کا عظیم گوشہ
    جامعۃ الدعوۃ السلامیۃ
    مرکز طیبہ مریدکے
    [​IMG]

    1992ءمیں ملک بھر میں دینی مدارس کا ایک مضبوط نیٹ ورک قائم کرنے کا پروگرام بنایا گیا اور ابتداء مرکز طیبہ مرید کے میں جامعۃ الدعوۃ السلامیۃ کے نام سے ایک عظیم الشان ادارہ قائم کیا گیا۔ قاضی شرعی ثالثی عدالت جماعتہ الدعوۃ پاکستان مفتی عبدالرحمن عابد حفظہ اللہ اس کے مدیر ہیں ۔ الحمداللہ ملک بھر میں جامعۃ الدعوۃ السلامیۃ مرکز طیبہ مرید کے تحت 74 ادراے قرآن وسنت کی تعلیم دے رہے ہیں ان میں سے 21 ادراے درس نظامی اور 53 ادرارے حفظ القرآن اور اتقان القرآن کی تعلیم دے رہے ہیں ۔
    فضیلتہ الشیخ حافظ عبدالسلام بن محمد حفظہ اللہ ان تمام جامعات کی نگرانی کررہے ہیں۔

    تاسیس جامعۃ الدعوۃ الاسلامیۃ
    شوال 1412ھ بمطابق اپریل 1992 میں جامعۃ الدعوۃ السلامیۃ مرکز طیبہ مرید کے میں پڑھائی کا آغاز کیا گیا۔دینی مدارس سے سند فراغت حاصل کرنے والے طلبہ کو بہترین داعی اور کامیاب معلم کے طور پر تیار کرنے کی غرض سے " دروہ تدریب الدعاۃ المعلمین" کا اہتمام کیا گیا۔ طلبہ کی تدریس اور جامعہ کی مجموعی نگرانی کے لیے حافظ عبدالسلام بن محمد حفظہ اللہ کی خدمات حاصل کی گئیں۔ اس ایک سالہ کورس میں طلبہ کو قرآن وحدیث سے متعلقہ علوم میں تخصص کروایا گیا، اگلے سال 1993سے دورہ تدریب الدعاۃ والمعلمین کے ساتھ ساتھ "شعبہ تعلیم الکتاب والسنۃ" کی ابتدائی کلاس شروع کرنے کا پروگرام طے پایا۔
    " شعبہ تعلیم الکتاب والسنۃ " کا عرصہ 6 سال رکھا گیا۔ ملک بھر سے جید علماء کے ایک اجلاس میں اس کا نصاب طے پایا گیا اور وقتاَ وفوقتاَ علماء کی ایک کمیٹی نصاب پر نظرثانی کرتی رہتی ہے۔
    جامعہ کے اہداف و مقاصد
    1:امت مسلمہ کے لیے قرآن و حدیث اور ان کے معاون علوم کی مکمل تعلیم کا بندوبست کرنا
    2:قرآن و سنت کی بنیاد پر ایسے راسخ فی العلم ' صحیح العقیدہ اور نبوی منہج کے حامل علمائے کرام تیار کرنا جو علمی ' عملی اور فکری محاذوں پر امت مسلمہ کی کما حقہ رہنمائی کرسکیں۔
    3:معاشرہ کے تمام افراد میں دینی علوم کے حصول کا شوق پیدا کرنا اور اسلام پر عمل کی دعوت دیتے ہوئے تمام معاشرے کی اصلاح کی کوشش کرنا۔
    4: اللہ کے دین "اسلام " کو تمام ادیان پر غالب کرنے کی ہر ممکن کوشش کرنا ۔

    جامعۃ کے شعبہ جات
    شعبہ تعلیم الکتاب والسنہ
    اس شعبہ کا مقصد ایسے راسخ العقیدہ علماء کی تیاری ہے جو قرآن وسنت اور ان کے متعلقہ علوم پر اچھی طرح دستردس رکھتے ہوں اور امت مسلمہ کہ ہر طرح سے رہمنائی کا فریضہ سرانجام دے سکتے ہوں۔
    یہ شعبہ دو مرحلوں پر مشمتل ہے
    1:المرحلتہ الثانویہ (مدت تعلیم 3 سال)
    2:المرحلتہ العالیہ (مدت تعلیم 3 سال)
    شرائط داخلہ: المرحلتہ الثانویہ (ابتدائی مرحلہ)کے سال اول میں داخلہ کا خواہشمند طالب علم مڈل پاس یا اس کے مساوی استعداد کا حامل اور ناظرہ قرآن پڑھا ہوا ہو یا قرآن مجید کا حافظ ہو اور اردو اچھی طرح لکھنا پڑھنا جانتا ہو۔
    ٭جو بچے مڈل پاس نہ ہوں مگر اردو پڑھ سکتے ہوں انہیں ایک سال کے لیے اعدادی کلاس میں داخل کیا جاتا ہے تاکہ وہ اردو لکھنے پڑھنے کی استعداد اچھی طرح بناسکیں ۔ پھر اس کے بعد انہیں ثانویہ کے سال اول میں داخلہ دیا جاتا ہے۔
    ٭ثانویہ عالیہ کی تمام کلاسوں میں بھی داخلہ ہوتا ہے
    ٭تمام داخلہ انٹرویو کی بنیاد پر ہوتے ہیں ۔

    شعبہ تحفیظ القرآن و اتقان القرآن
    ٭شعبہ تحفیظ القرآن و اتقان القرآن میں داخلہ کے لئے طالب علم پرائمری پاس پو اور ناظرہ قرآن پڑھ سکتا ہو۔
    ٭شعبہ اتقان القرآن میں ان تمام حفاط کو داخلہ دیا جاتا ہے جو منزل یاد کرنا چاہتتے ہوں۔ اسکے ساتھ انہیں تجوید کے مطابق تلفظ وغیرہ درست کروا کر ملک میں قائم " معاھد لتخفیظ القرآن" کے استاتذہ کے طور پر تیار کیا جاتا ہے۔
    شعبہ تجوید القرآن
    ٭داخلہ کے امیدوار کا حافظ قرآن یا شعبہ تعلیم الکتاب والسنہ کا فارغ ہونا ضروری ہے۔ ایم اے عربی/اسلامیات طلبہ بھی داخلہ کے اہل ہیں۔
    اوقات داخلہ
    جامعتہ کے تمام شعبوں میں عمومی داخلہ شوال میں کیا جاتا ہے ۔جبکہ مڈل'میٹرک' و انٹر وغیرہ کے طلبہ اپنے امتحانات سے فارغ ہوکر داخلہ حاصل کرنے کے لیے رابطہ کرسکتے ہیں۔
    دورہ صفہ
    تمام مسلمان افراد کو جو قرآن و سنت کے علم کے حصول کے لیے لمبا وقت نہیں نکال سکتے بنیادی اسلامی تعلیمات سے روشناش کرانے اور صحیح اسلامی عقیدہ اور نبوئ منہج پر تربیت دینے کے لیے دورہ صفہ کا اہتمام کیا گیا ہے ۔
    یہ 21 دن پر مشتمل دورہ ہوتا ہے جس میں دو ہفتے طلبہ باقاعدہ اسباق پڑھتے ہیں اور بنیادی مسائل وعقائد پر آگاہی حاصل کرتے ہیں ۔علاوہ ازیں طلبہ کو جمعہ پڑھانے 'عید پڑھانے' جنازہ پڑھانے' اور تقریر کا باقاعدہ طریقہ سکھایا جاتا ہے اور پھر ایک ہفتہ مختلف علاقوں میں ان کے استاتذہ کی زیرنگرانی عملی تربیت اور مشق کروائی جاتی ہے ۔
    شرائط داخلہ
    ٭ اس تربیتی وو تعلیمی دور میں ہر خواہش مند داخلہ لے سکتا ہے ۔البتہ امیدوار کے لیے اپنے علاقہ کے مسئول کا تعارفی خط لانا لازمی ہے ۔ داخلہ ہر جمعہ کے دن ہوتا ہے ،ہفتہ والے دن سے پڑھائی شروع ہوجاتی ہے۔
    ٭ مرکز طیبہ مرید کے میں خواتین کیلئے علیحدہ "دورہ صفہ" کا اہتمام کیا جاتا ہے ۔یہ دورہ عام طور پر انگریزی مہینے کی یکم تاریخ کو شروع ہوتا ہے جس کا باقاعدہ اعلام "ماہنامہ طیبات" اور ہفت روزہ "جرار" میں کردیا جاتا ہے۔

    شعبہ تعلیم الکتاب و السنتہ برائے طالبات
    اس شعبہ میں بچیوں کو قرآن و حدیث اور ان کے معاون علوم کی تعلیم دی جاتی ہے۔ یہ شعبہ فی الحال مرکز طیبہ مرید کے،مرکزالبدر، بہاولپور اور جامعہ الدراسات کراچی میں کام کررہا ہے اور اس میں بیرونی بچیوں کی رہائش کا بندوبست نہیں ہے۔
    طلبہ کے لیے سہولیات
    قیام وطعام ۔ علاج معالجہ ، دارالامانات، نصابی کتب خانہ،لائبریری، ماہانہ وظائف، شاندار کمپوٹر لیب۔
    [SUB]اضافی سرگرمیاں[/SUB]
    جامعہ کے طلبا کی اضافی سرگرمیاں میں مندرجہ ذیل چیزیں شامل ہیں۔
    حفظ قرآن: یوں تو ہر کلاس کے نصاب میں کم ازکم ایک پارہ تجوید کے قواعد کے مطابق زبانی یاد کرنا شامل ہے لیکن طلبہ حفظ قرآن کریم کا شوق پیدا کرنے کے لیے یہ طے کیا گیا ہے اگر کوئی طالب علم دوران سال تجوید کے قواعد کے مطابق حفط کر کے کسی غلطی کے بنا سنا دے تو اسے نقد انعام دیا جاتا ہے۔ اس ترغیب کے ساتھ ہر سال سینکڑوں طالب علم قرآن کریم کے پارے حفظ کرنے کی سعادت حاصل کررہے ہیں۔
    حفظ حدیث: قرآن کریم کے حفظ کے ساتھ ساتھ احادیث نبویہ کا زبانی یاد کرنا بھی کسی بڑی فضیلت کا حامل ہے ۔سلف صالحین ہمیشہ نبی ﷺ کے فرامین کو زبای یا دکر نے کی کوشش کرتے تھے۔
    چنانچہ طلبہ کو اس طرف ترغیب دلانے کے لیے بھی مختلف انعامات رکھے گئے ہیں ۔
    ہر سال کم و پیش 300 طلبہ حفظ حدیث پر انعام حاصل کرتے ہیں۔
    فن خابت: طلبہ کو فن خطابت کی ترتیب دینے کے لئے ہر سوموار عصر کی نمازکے بعد ہر کلاس کا " اسیوعی اجلاس " ہوتا ہے۔ جس کی نگرانی ہر کلاس کا انچارچ استاد خود فرماتے ہیں۔ اس اجلاس میں باری آنے پر ہر طالب علم کو تقریر کرنا ہوتی ہے۔ اس طرح تقریباَ ہر طالب علم سند فرغت حاصل کرنے تک ایک بہترین مقرر بن چکا ہوتا ہے۔
    علاوہ ازیں ہر ماہ طلبہ کے درمیان " تقریری مقابلہ" بھی کروایا جاتا ہے نمایاں پوزیشن والے طلبہ کو انعام بھی دیا جاتا ہے
    التدریب البدنی: جامعہ میں زیر تعلیم تمام طلبہ کی جسمانی تربیت اور بہترین نشونما کے لیے ماہر اساتذہ کی زیرنگرانی یہ شعبہ قائم ہے۔ جسمانی تربیت سے متعلقہ وہ تمام کھیل فنون اور مہارتیں جن کی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ترغیب دلائی ہے یا انہیں اختیار کرنے کا حکم دیا ہے،مستقل کے ان معماران ملت کو سکھانے کی پوری کوشش کی جاتی یے۔ ان کا باقاعدہ ایک نصاب ہے اور سالانہ امتحانات میں باقاعدہ اس کا امتحان بھی لیا جاتا ہے،نیز سال کے آخر میں جامعہ کے تحت کام کرنے والے معاہد کے طلبہ کے درمیان ان تمام کھیلوں اور مہارتوں کے مقابلے بھی کروائے جاتے ہیں ۔

    امتحانات
    جامعہ میں سالانہ اور ششمائی دو امتحانات ہوتے ہیں۔ جس کے لیے "لجئتہ الامتحانات " قائم ہے یہ کمیٹی امتحانات سے متعلقہ تمام معاملات کی نگرانی کرتی ہے ۔تمام معاہد کے سالانہ امتحانات کے پرچے مرکز طیبہ مرید کے سے ہی ارسال کئے جاتے ہیں ۔حفظ کے تمام معاہد کا امتحان لینے کے لیے ممتحن اساتذہ کا تقرر بھی مرکز سے ہی کیا جاتا ہے۔
    امتحان میں ناکام رہنے والے طلبہ کو مزید ایک امتحان کو موقع دیا جاتا ہے۔جامعہ کا "وفاق المدارس اسلفیہ" سے بھی الحاق ہے اور طلبہ کو امتحان میں شرکت کی سہولیات فراہم کی جاتی ہے۔
    مقابلہ کے امتحانات
    ٭جامعہ کے تحت کام کرنے والے تمام معاہد میں باہم مسابقہ کا رحجان پیدا کرنے کے لیے ہر سال سالانہ امتحانات کے موقع پر "مقابلہ کے امتحانات" کا اہتمام کیا جاتا ہے
    ٭مقابلہ کے امتحان کے لیے اعدادی کلاس اور مرحلہ ثانویہ کیا تمام کلاسوں کے طلبہ میں سے ذہین طلبہ کا انتخاب کیا جاتاہے ۔پرچہ میں ہر کلاس کے پانچ منتخب مضامین سے دس سوال دیے جاتے ہیں طلبہ کو تمام سوال حل کرنے ہوتے ہیں ،یاد رہے یر کلاس کا پرچہ بنانے اور پھر تمام طلبہ کے پرچہ جات چیک کرنے کا کام ایک ہی استاد صاحب سرانجام دیتے ہیں۔ تاکہ پرچہ دیکھنے میں یکسانیت قائم رہ سکے۔
    سہ ماہی مجلہ" عزم طلبہ "
    طلبہ کی اضافی سرگرمیوں میں حفظ قرآن ' حفظ حدیث اور فن خطابت کیساتھ طلبہ میں تحریر کا ذوق پیدا کرنے کے لیے " صوت الجامعہ " کا اجرء کیا گیا تھا۔
    سال 2012 میں سند فراغت حاصل کرنے والی کلاس ابوہریرہ "درجہ بخاری " نے اس سلسلہ وار میگزین کو سہ ماہی کرکے پورے ملک کے طلبہ کو تحریری ذوق پورا کرنے کی دعوت دی۔ الحمداللہ اسکی سرپرستی جماعتی ذمہ داران اورنگرانی جامعہ کے اساتذہ اور کاوش کلاس ابوہریرہ "درجہ بخاری" کے طلبہ کرتے ہیں۔
    مجلہ عزم طلبہ!انشاءاللہ عنقریب آل پاکستان تحریری مقابلہ کا اہتمام کرے گا۔
  2. Rafi ud din

    Rafi ud din رکن

    مراسلے:
    2
    Assalm o Alaikum wa Rahmatullah wa brakatoho
    Muhtram shaikh sahib!
    I am student of Islamic Studies in Sargodha University.My topic of my thesis is "Punjab maen Uloom ul Quran wa Tafseer per ghair matboa Urdu mwad" please guide me and send me the relavant material for said topic.I will be thankful to you for this kind of act and I will pray for your forgiveness.
    your Islamic brother Rafi ud Din 03336750546,03016998303 email drfi@ymail.com

اس صفحے کی تشہیر