امریکہ ايک اور امريکی منصوبہ

fawad نے 'خبروں کی دنیا' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏11 ستمبر 2015

  1. fawad

    fawad امریکی نمائندہ

    مراسلے:
    181
    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ


    امریکی حکومت کی جانب سے پاکستانی پولیس کو دہشت گردی اور

    عسکریت پسندی کے خلاف لڑنے کیلئے گیارہ بکتر بند گاڑیوں کی فراہمی

    امریکی محکمہ خارجہ کے قائم مقام معاون سیکرٹری ڈیوڈ رینز نے آج گیارہ بکتر بند گاڑیاں اسلام آباد پولیس ، فرنٹیئر کانسٹیبلری اور خیبر پختونخواپولیس کےحوالے کیں، جن کی مالیت ۲۸ کروڑ روپے (۲۷ لاکھ ڈالر) سے زیادہ ہے۔ امریکی حکومت کی جانب سے اِن بکتر بند گاڑیوں کی فراہمی پاکستانی عوام کے تحفظ و سلامتی کو بہتر بنانے کے لئے پاکستان کے ساتھ ملکرکام کرنے کے عزم کی عکاس ہے۔ تقریب میں وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال، اسلام آباد پولیس کے انسپکٹر جنرل ڈاکٹر سلطان اعظم تیموری، فرنٹیئر کانسٹیبلری کے کمانڈنٹ لیاقت علی خان اور خیبر پختونخواپولیس کے ایڈیشنل انسپکٹر جنرل ڈاکٹر محمد نعیم خان نے بھی شرکت کی۔

    قائم مقام معاون سیکرٹری خارجہ ڈیوڈ رینزنے کہا کہ پاکستانی پولیس عوام کو محفوظ رکھنے کے لئے ہر روز قربانیاں دیتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ اور پاکستان ،دونوں ملکوں میں ہم اپنے عوام کی حفاظت کے لئے پولیس پر انحصار کرتے ہیں اور ہم دہشت گردی کے خلاف لڑائی اور پاکستان میں سلامتی و قانون کی حکمرانی کے لئے پاکستانی عوام کا ساتھ دیتے رہیں گے۔

    امریکی کمپنی لینکو نے یہ گاڑیاں بنائی ہیں جو دُور دراز اور دشوار گزار علاقوں میں کام کرنے کی صلاحیت رکھتی ہیں اور جرائم، دہشت گردی اور عسکریت پسندی کے سدباب اور بیخ کنی کے لئے سویلین سیکورٹی فورسز کے لئے معاون ثابت ہوں گی۔ یہ بکتر بند گاڑیاں پولیس کی کارروائی کی صلاحیت میں بہتری لانے اور دہشت گردوں، عسکریت پسندوں اور منشیات کے اسمگلروں سے درپیش خطرات کا مقابلہ کرتے وقت اہلکاروں کی زندگیاں بچانے کے لئے اشد ضروری ہیں۔ یہ گروہ پاکستان بھر میں پولیس اہلکاروں کو نشانہ بناتے ہیں۔ نیشنل پولیس بیورو کے مطابق تقریباً ساڑھے چھ ہزار پولیس اہلکار پاکستان میں فرائض منصبی کی ادائیگی کے دوران اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرچکے ہیں۔

    امریکی ادارہ برائے امور ِانسداد ِمنشیات و نفاذ ِقانون (آئی این ایل) ،جس نے اِن بکتر بند گاڑیوں کے لئے فنڈز مہیا کئےہیں ، جرائم و بدعنوانی کے انسداد اور منشیات کے دھندے کی روک تھام، پولیس کے اداروں کو بہتر بنانے اور شفاف و جوابدہ نظام عدل کے فروغ کے لئے ۹۰ سے زائد ملکوں میں مصروف ِعمل ہے۔


    آئی این ایل کے بارے میں مزید جاننے کے لئے درج ذیل لنک ملاحظہ کیجئے:

    Bureau of International Narcotics and Law Enforcement Affairs (INL)

    ###


    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    digitaloutreach@state.gov

    www.state.gov

    https://twitter.com/USDOSDOT_Urdu

    Security Check Required

    Digital Outreach Team (@doturdu) • Instagram photos and videos

    Us Dot | Flickr
  2. fawad

    fawad امریکی نمائندہ

    مراسلے:
    181
    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ


    نسٹ اور یوای ٹی پشاورسے ۳۱ پاکستانی انجینئرزایری زونا اسٹیٹ یونیورسٹی کے تبادلہ پروگرام میں شرکت کیلئے امریکہ روانہ


    اسلا م آباد (۵ ِجنوری، ۲۰۱۸ء) __ امریکی ادارہ برائے بین الاقوامی ترقی (یو ایس ایڈ) اور پاکستانی حکام نے امریکہ تعلیم حاصل کرنے کے لیے جانے والے نیشنل یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی اور یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی پشاور (یو ای ٹی پشاور) کے ۲۴ طالب علموں اور اساتذہ کو رخصت کیا ، جہاں وہ ایری زونا اسٹیٹ یونیورسٹی (اے ایس یو) میں ایک سمسٹر گزاریں گے۔امریکی مالی معاونت سے چلنے والے اس تبادلہ پروگرام کے تحت ، یہ طالب علم اور اساتذہ پاکستان کو درپیش توانائی کے شدید بحران کے حوالے سے تحقیق کریں گے۔


    یہ انرجی انجینئرنگ سے تعلق رکھنے والے طلبہ اور فیکلٹی ممبران کا پانچواں گروپ ہے جو کہ امریکہ میں یو ایس ایڈ کی مالی معاونت سے چلنے والے یو ایس پاکستان سنیٹرز فار ایڈوانس سٹڈیز اِن انرجی (یو ایس پی سی اے ایس۔ای) میں شرکت کیلئے جا رہے ہیں۔ امریکہ میں اپنے چار ماہ قیام کے دوران یہ طلبہ اور فیکلٹی ممبران اے ایس یو کی تجربہ گاہوں میں امریکی پروفیسروں کی زیر نگرانی شمسی پینلز اور بیٹریوں کے حوالے سے عملی تحقیق کے دوران اپنے تجربات کریں گے اور مشاہدات اور نتائج کے تجزیے پر کام کریں گے۔ اس کے علاوہ وہ امریکہ میں بجلی کی پیداوار کے طریقہ کار کو جاننے کیلئے صنعتی مراکز کا دورہ بھی کرینگے۔


    یو ایس ایڈ کے مشن ڈائریکٹر جیری بسن نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ تبادلہ پروگرام جو توانائی کے شعبے میں تحقیق پر مبنی ہے ،امریکہ اور پاکستان کے درمیان شراکت داری کی علامت ہے تاکہ مضبوط تعلیمی ادارے پروان چڑھائے جائیں ۔ انہوں نے طلبہ پر زور دیا کہ وہ اس موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے اے ایس یو کے تجربہ کار پروفیسروں کی زیر نگرانی توانائی کے شعبے میں اپنی تحقیق مزید نکھاریں۔


    پروگرام میں شرکت کیلئے جانے والے طلبہ نے بین الاقوامی محققین کے ساتھ مل کر کام کرنے پر جوش و جذبے کااظہار کیا۔


    اب تک نسٹ اور یو ای ٹی پشاور کے ۱۱۰ طالب علموں نے تبادلہ پروگرام کامیابی سے مکمل کر لیے ہیں اور وہ توانائی کے منصوبوں پر کام کر رہے ہیں۔ ایسے تبادلہ پروگرام، فیکلٹی ممبران کو موقع فراہم کرتے ہیں کہ وہ اپنی تدریسی صلاحیتوں کو نکھاریں اور کارپوریٹ سیکٹر اور تدریسی عملے کے درمیان کامیاب اشتراکِ کا ر کو مضبوط بنائیں جبکہ طلبہ اپنی تحقیق اور صنعتوں کے متعلق اپنے علم وآگہی پر توجہ مرکوز کریں۔


    یو ایس پی سی اے ایس۔ای کا مقصد نصاب کی تیاری، تحقیق،نئی تجربہ گاہوں کا قیام اور تبادلہ پروگرام شامل ہیں۔ امید ہے کہ ہائیر ایجوکیشن کمیشن کے زیر اہتمام نسٹ اور یو ای ٹی پشاور کا پاکستان کے دیرپاتوانائی کے بہترین تحقیقی مرکز بنیں گےاور یہ مستقبل میں توانائی کی اطلاقی تحقیق کے شعبے میں گریجویٹس کی نئی نسل تیار کریں گے۔ یہ پروگرام خواتین اور سہولیات سے محروم نوجوانوں کی ترقی کے نئے معیار مقرر کرے گا۔


    تعلیمی تبادلہ کے پروگرام یو ایس ایڈ کے اس پانچ سالہ پروگرام کا حصہ ہے جس کے تحت امریکی حکومت نے یو ایس پاکستان سینٹرز فار ایڈوانسڈ سٹڈیز پروگرام کے لئے ۱۲۷ ملین ڈالر کی سرمایہ کاری کی ہے۔ اس پروگرام کا مقصد پاکستان کی توانائی، آبی،زرعی اور غذائی قلت کے حوالے سے مسائل کے جد ت پر مبنی قابل عمل حل تلاش کرنا ہے۔


    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    digitaloutreach@state.gov

    www.state.gov

    https://twitter.com/USDOSDOT_Urdu

    Security Check Required

    Digital Outreach Team (@doturdu) • Instagram photos and videos

    Us Dot | Flickr

اس صفحے کی تشہیر