آمین آھستہ

زبیراحمد نے 'نماز' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏21 جنوری 2019

  1. زبیراحمد

    زبیراحمد قیدی

    مراسلے:
    53
    علماء_امت کا فیصلہ ہے کہ جن اختلافی مسائل میں ایک سے زائد صورتیں "سنّت" سے ثابت ہیں، ان میں عمل خواہ ایک صورت پر ہو مگر تمام صورتوں کو شرعآ درست سمجھنا ضروری ہے۔
    القرآن : ادعوا رَبَّكُم تَضَرُّعًا وَخُفيَةً {7:55} یعنی تم دعا کرو اپنے رب سے عاجزی سے گڑگڑا کر اور خفیہ (دبی) آواز سے
    الحدیث : "قال عطاء آمین دعا" یعنی حضرت عطاءؒ نے فرمایا کہ آمین دعا ہے.[صحیح بخاري: ۱/۱۰۷، کتاب الأذان، باب جہر الإمام بالتأمین]؛
    القرآن :‫وَاذْكُرْ رَبَّكَ فـي نَفْسِكَ تَضَرُّعًاوَخِيفَةً {7:205} یعنی ذکر کر اپنے رب کا اپنےدل (جی) میں عاجزی سے گڑگڑا کر اور خفیہ (دبی) آواز سے
    الحدیث : آمِينَ اسْمٌ مِنْ أَسْمَاءِ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ. یعنی آمین الله تعالیٰ کے ناموں میں سے ایک نام ہے.[مصنف عبد الرزاق: ٢/٦٤ ، مصنف ابن أبي شيبة::٢/٣١٦]؛


    امام رازیؒ (606هـ) اپنی [تفسیر کبیر] میں فرماتے ہیں
    ترجمہ : فرمایا امام ابو حنیفہؒ نے کہ پوشیدہ (چھپاکر) آمین کہنا افضل ہے. اور امام شافعیؒفرماتے ہیں کہ اعلانیہ کہنا افضل ہے، اور دلیل قائم کی امام ابو حنیفہؒ نے اپنے قول کے صحیح ہونے پر ، فرمایا : اس قول (یعنی آمین) میں دو وجہیں ہیں : پہلی یہ کہ وہ دعا ہے اور دوسری یہ کہ وہ الله کے ناموں میں سے ہے. پس اگر وہ دعا ہو تو واجب ہے اس کا چھپانا (یعنی پوشیدہ کہنا) الله تعالیٰ کے فرمان (کے سبب) کہ : (تم دعا کرو اپنے رب سے عاجزی سے گڑگڑا کر اور خفیہ (دبی) آواز سے) [الأعراف : 25] اور اگر وہ (آمین) ہو نام الله تعالیٰ کے ناموں میں سے تو بھی واجب ہے چھپانا (یعنی پوشیدہ کہنا) اس کا الله تعالیٰ کے فرمان کے سبب کہ (ذکر کر اپنے رب کا اپنے دل (جی) میں عاجزی سے گڑگڑا کر اور خفیہ (دبی) آواز سے) [الأعراف : 205] پس ثابت ہوا واجب ہونا اور مندوب (مستحب) سے کم تو پھر بھی نہیں. ہم (شافعیہ) بھی یہ قول (مندوب و مستحب ہونے) کا کہتے ہیں.؛
    [​IMG]
    حضرت وائلؓ فرماتے ہیں کہ میں نے نماز پڑھی ساتھ رسول الله صلی الله علیہ وسلم کے، جب آپ نے پڑھا "غَيْرِ الْمَغْضُوبِ عَلَيْهِمْ وَلا الضَّالِّينَ" (تو) کہا آمین پست (آہستہ) کرتے اپنی آواز کو اور رکھتے اپنے دائیں ہاتھ کو بائیں ہاتھ پر (اور ختم نماز پر) سلام پھیرا اپنے دائیں طرف اور (پھر) بائیں طرف.
    [​IMG]
    علقمہ بن وائل اپنے والد (حضرت وائلؓ) سے مروی ہیں کہ انہوں نے فرمایا کہ میں نے نماز پڑھی ساتھ رسول الله صلی الله علیہ وسلم کے، جب آپ نے پڑھا "غَيْرِ الْمَغْضُوبِ عَلَيْهِمْ وَلا الضَّالِّينَ" (تو) کہا آمین پست (آہستہ) کرتے اپنی آواز کو ... (امام حاکم فرماتے ہیں کہ) یہ حدیث (سند کے اعتبار سے) صحیح ہے جسے شیخین (یعنی امام بخاری و مسلم) نے نہیں لیا.[المستدرك على الصحيحين (سنة الوفاة: 405) » » كِتَابُ التَّفْسِيرِ ، رقم الحديث: 2972(2/278)]

    [​IMG]
  2. زبیراحمد

    زبیراحمد قیدی

    مراسلے:
    53
    یہ پوسٹ پیش کار کی بھی رائے ہے اگر کوئی اختلاف کرنا چاہتا ہے تو شائستہ انداز کر سکتا ہے اگر انتظامیہ معترض ہو تو مذکورہ بالا پوسٹ حذف کرسکتی ہے

اس صفحے کی تشہیر